اردو ہائیکو نگاری۔ ایک مختصر جائزہ… سہیل احمد صدیقی

مندرجہ ذیل مضمون ۵۱ مارچ ۸۰۰۲ء کو جاپانی ثقافتی مرکز، کونسلیٹ جنرل آف جاپان (کراچی) کے زیر اہتمام منعقدہ سلور جوبلی ہائیکو مشاعرے میں بطور کلیدی مضمون پیش کیا گیا۔
     اردو دنیا کی سب سے منفرد زبان ہے جس میں ہر چھوٹی بڑی زبان کے ذخیرہ الفاظ اور ادب کوبحسن و خوبی اپنانے اور سمونے کی صلاحیت بدرجہ اتم موجود ہی۔راقمِ سطور کی تحقیق کے مطابق کم و بیش پینتیس (۵۳) زبانوں کے الفاظ کسی نہ کسی طرح اس عظیم زبان کے ذخیرے میں شامل ہیں۔ مغربی ادب سے متاثر ہونے والے اکثر خواندہ اور بعض بزعم خویش عالمِ شعرو سخن یہ سمجھتے ہیں کہ طبع زاد ادب کی تخلیق ہو یا تراجم … اردو ہر دو لحاظ سے کمزور زبان ہی۔اسی طرح بہت سے پڑھے لکھے اس غلط فہمی میں نہ صرف مبتلا ہیں بلکہ اس کا ببانگ دہل پرچار بھی کرتے ہیں کہ اس زبان میں جامعیت کا عنصر مفقود ہی‘ مختصر و جامع جملے محض انگریزی زبان میں ادا کئے جاسکتے ہیں…یہ دونوں باتیں عملاً غلط ثابت ہوچکی ہیں اور اگر کوئی ایسا سمجھتا اور کہتا ہے تو اپنی کم علمی ‘ نا فہمی اور بے جا تعصب کا اظہار کرتا ہی۔
     ہماری عظیم زبان کے متنوع ادب میں شامل بہت کم عرصے میں ،بہت تیزی سے مقبول ہونے والی صنف سخن ہائیکو ہی۔یہ محض اردو کا معاملہ نہیں‘ اس وقت دنیا کی تمام قابل ذکر ‘ بڑی (یا کم از کم اپنے خطے کی حد تک)نمایاں زبانوں میں سب سے زیادہ طبع آزمائی اسی صنف سخن پر ہورہی ہی۔     
     ہائیکو کے متعلق مبسوط تحقیقی مقالہ لکھنا اور تمام مباحث کو ان صفحات پر بالتفصیل پیش کرنا راقم سطور کے لیے محال نہیں‘ مگراس مقام پر ممکن بھی نہیں… لہٰذا ضروری معلوم ہوتا ہے کہ حاضرین کرام کی خدمت میں مختصر تعارفی مضمون پیش کیا جائی۔
     جاپانی شاعری دنیا کے قدیم ترین محفوظ سرمایہ ادب میں شامل ہی۔سنسکرت ‘ لاطینی ‘ یونانی ‘ عبرانی اور کسی حد تک عربی زبانوں میں محفوظ لوک (عوامی) ادب انسان کی شعر وادب سے ازلی وابستگی کا مظہر ہی۔ آٹھویں صدی عیسوی کے وسط میں مَن یّوشو [Manyusho]کے نام سے ساڑھے چار ہزار جاپانی منظومات کا مجموعہ مرتب و شائع کیا گیا۔  ۵۰۹ء ؁  یعنی دسویں صدی کے آغاز میں ایک ہزار ایک سو گیارہ منظومات کا مجموعہ کوکن شو اور پھر  ۱۵۹ئ؁ میں تیسرا مجموعہ گوسین شو کے عنوان سے منظر عام پر آیا۔
     جاپان کی قدیم ترین اصناف سخن میں چوکا ‘ واکا یا تنکا اور رینگا(نظم مسلسل) شامل ہیں۔ نظم مسلسل کے مختلف تجربات صدیوں جاری رہنے کے بعد اس میں سے ایک حصہ ہائیکئی [Haikai]کے نام سے جدا کیا گیا‘ بعد ازآں اسے ہوکو [Hokku]کہا گیا اور پھر یہ شعری صنف ہائیکو [Haiku]کے نام سے موسوم ہوئی…»یہ معاملہ کسی حد تک اردو کی سب سے توانا صنف سخن غزل کا ہے جو کبھی عربی قصیدے میں تشبیب کے نام سے شامل ایک حصہ تھی‘ پھر عربی سے ترکی اور بعد ازآں فارسی میں یہی تشبیب غزل بن کر گویا ادب کی دلھن قرار پائی۔فارسی سے ہم نے اردو میں اس منفرد صنف کا پودا لگایا تو ترقی کرتے کرتے یہ شجر سایہ دار اپنی ماں سے آگے نکل گیا…آج لفظ غزل ادا کرتے ہی اردو غزل کی ہر عمدہ مثال سامنے آتی ہی۔«
S     جدید ہائیکو کا بانی عظیم جاپانی شاعر مَت سّو ٶ باشو [Matsuo Basho](۴۴۶۱ء تا ۴۹۶۱ئ) تھا۔گویا بطور جدا گانہ صنف ہائیکو کا آغاز سترہویں صدی میں ہوا۔باشو ایک سیلانی شاعر تھا۔ آج اس کا شمار دنیا کے عظیم ترین شعراء میں کیا جاتاہے اور اس کے طے کردہ جادہ ٔ سیاحت پر چل کر جاپان کی سیر کرنا جاپانی اور یورپی اہل سخن کے نزدیک عظیم سعادت ہی۔ہائیکو کے چار بڑے اساتذہ میں باشو ‘ بوسون [Buson]‘ اِسّا [Issa] اور شیکی [Shiki]شامل ہیں… جدید دور میں ہائیکو ترقی کے مختلف مدارج طے کرچکی ہے ‘ تکنیک ،ہئیت اور موضوعات کے تنوع کے باوصف، ان عظیم سخنوروں کی تعلیمات کو رد نہیں کیا جاسکتا۔
     بدھ مت کی شاخ زین کا فلسفہ ساتوری یعنی آگہی، ہائیکو کا بنیادی فلسفہ ہی۔ اس فلسفے کے تحت مناظر فطرت ، مظاہر قدرت کے مشاہدے نیز مراقبے کے ذریعے اس ذات اقدس تک رسائی حاصل کی جاتی ہے جو کائنات میں اول و قدیم ہی، لیکن اگر غور کریں تو معاملہ ذرا گنجلک ہوجاتا ہے کیوں کہ بدھ مت کی اصل، بنیادی تعلیمات میں خدا کاواضح تصور موجود نہیں!
آج ہائیکو دنیا کے ہر موضوع سے متعلق نظر آتی ہی،مگر مناظر و مظاہر کے گاہے گاہے باقاعدہ انفرادی واجتماعی گروہ در گروہ مطالعے ‘ مشاہدے اور مراقبے کا اہتمام مختلف تہواروں پر کیا جاتا ہی۔ گویا اس صنف کی بنیاد آج بھی ترو تازہ ہی۔
     ہائیکو کی تکنیکی بنیاد یک صوتی حروف [Monosyllabic chararacters] پر ہے جو غیر مقفیٰnon-rhymed] ہوتے ہیں اور نظم کرتے وقت ان کی ترتیب یہ ہوتی ہی:     پانچ۔سات۔پانچ=۵۔۷۔۵
موسیقی کی بنیاد پر اسے یوں سمجھا جاسکتا ہی:             سارے گاماپا=۵
دھا نی سارے گاماپا=۷
سارے گاماپا=۵
یعنی جب آپ اپنی زبان میں ہائیکو نظم کریں تو اس کی شکل یو ں ہوگی کہ پہلے مصرع میں الفاظ ،وزن کے لحاظ سے پانچ صوتی ہوں گی، دوسرے میں سات اور تیسرے میں پھر پانچ۔جاپانی ہائیکو میں موسم کی اہمیت بہت زیادہ ہی۔ اس نظم میں کی دائی [KIDAI]یعنی موضوع ِ  موسم [Season theme] اور کی گو [KIGO]یعنی حرفِ موسم یا حرف فصلSeason word]، ضروری عنصر ہوتے ہیں۔ جدید ہائیکو میں ان لازمی عناصر سے انحراف عام ہے مگر پابندی کا رواج ختم ہونے کی بجائے بہت مقبول ہی۔
1     دسمبر ۲۲۹۱ئ؁ میں معتبر ادبی جریدے ’نگار‘ (لکھنٶ) نے بیرسٹر سید حسن عابد جعفری کا یادگار مضمون ’’ جاپانی شاعری پر اک نظر‘‘ شائع کیا۔ فاضل مصنف نے اس نگارش کے ذریعے ہائیکو سمیت مختلف اصناف کا تعارف اردو گو طبقے سے کرایا۔یہ اہم مضمون بہت جلد فراموش کرد یا گیا، پھر ۶۳۹۱ئ؁ کی ابتداء میں ایک اور اہم جریدے ’ساقی‘ (دہلی) کا ’’ جاپان نمبر‘‘ شائع ہوا۔ اس اہم خصوصی شمارے میں عزیز تمنائی ،فضل حق قریشی اور علی ظہیر جیسے ادیبوں نے ہائیکو اور دیگر جاپانی اصناف کے تراجم کی خدمت انجام دی۔ مواد کی فراہمی میں نور الحسن برلاس کا کردار کلیدی تھا۔
     ۶۳۹۱ئ؁ سے ۰۶۹۱ئ؁ تک اردو میں جاپانی صنف سخن ہائیکو کے (بذریعہ انگریزی) تراجم کا سلسلہ مسلسل جاری رہا۔ نمایاں مترجمین میں حمید نظامی، میراجی ، ظفراقبال، کلیم الدین احمد ، عبدالعزیز خالد، قاضی سلیم وغیرہ شامل ہیں۔ ۰۶۹۱ء کی دہائی میں عبدالعزیز خالد کی کتاب
 ’’ غبار شبنم‘‘ کے ذریعے ہائیکو کے آزاد ، تکنیکی لحاظ سے محض سادہ سہ مصرعی تراجم سامنے آئی۔۳۶۹۱ئ؁ میں نامور اردو شاعر محسن بھوپالی(مرحوم) نے سندھی سے ہائیکو کے منظوم تراجم کرکے ’افکار‘ (کراچی) میں شائع کرائے ۔۶۶۹۱ئ؁میں قاضی سلیم کے آزاد ہائیکو کی اشاعت کا ذکر ملتا ہے جو ہئیت کے لحاظ سے ناقص نظمیں تھیں۔۰۷۹۱ئ؁  یا  ۱۷۹۱ئ؁  کی بات ہے جب معروف شاعر آفاق صدیقی اور ا ن کے دوستوں ڈاکٹر تنویر عباسی اور شیخ ایاز نے دریائے سندھ کے کنارے نجی محفل میں پہلی مرتبہ باقاعدہ اردو ہائیکو نظم کی۔ہماری خوش نصیبی ہے کہ محترم آفاق صدیقی صاحب اس وقت یہاں تشریف فرما ہیں۔» اس ضمن میں اولیت کے بعض اور انکشافات یا دعوے بھی موجود ہیں ، مگر تحقیق نہیں ہوسکی«
     ۰۷۹۱ئ؁ کی دہائی میںڈاکٹر محمد امین جاپان گئے تو وہاں انہیں ہائیکو سے باقاعدہ تعارف حاصل ہوا۔ ان کی کوشش اور تحریک سے ملتان اور پنجاب کے دیگر حصوں میں اس صنف کا رواج ہوا۔ڈاکٹر محمد امین نے اردو ہائیکو کا پہلا مجموعہ ۱۸۹۱ئ؁ میں مرتب کرکے شائع کیا جو اَب نایاب ہی۔ اس کے بعد اردو مجموعہ ہائے کلام کا سلسلہ چل پڑا اور آج ان کی تعداد کم وبیش پچاس ہی۔ علاقائی زبانوں میں بھی ہائیکو کا چلن اتنا زیادہ ہے کہ ان میں آئے دن مجموعے شائع ہورہے ہیں۔»ان کی تعداد کا تعین مشکل ہی، اندازے کے مطابق تقریباً ۰۵ ہوں گی«
     کراچی سمیت پاکستان بھر میں ہندوستان ‘ بنگلہ دیش ‘ امریکا‘ برطانیہ نیز دیگر خطوں میں اردو ہائیکو کی مقبول ترین بحر، بحر متقارب ہے یعنی:
 فعلن ، فعلن، فع/فعلن ، فعلن، فعلن ،فع/ فعلن ، فعلن، فع
اس کے برعکس پنجاب مکتب فکر نے اکثر بحر خفیف مسدس(فاعلاتن، مفاعلن، فعلن…) اپنائی ہی، جسے عرف عام میں مساوی الاوزانEqual meter] کہا جاتا ہے ۔ اب ذرا ان دو بحروں کی مثالیں ملاحظہ کیجئی:
بحر متقارب:      پانی کا جھرنا               »فعلن ، فعلن، فع«=۵ صوتی ارکان
                        ڈھونڈو تو مل جائے گا       »فعلن ، فعلن، فعلن ،فع«= ۷ صوتی ارکان
                        پیاسے مت مرنا           »فعلن ، فعلن، فع«=۵ صوتی ارکان
                                                                                   شاعر: اقبال حیدر
  بحر خفیف مسدس:          روشنی کی لکیر چھوڑ گیا
                                  شب کی کالی سلیٹ پر جگنو
                                  یاد آیا مجھے نسیم کوئی
                                                                شاعر: نسیم سحر
اردو میں ہائیکو کہنے والوں کی تعداد دو سو(۰۰۲) سے زائد ہی۔ ان میں بزرگ ترین سخنور تابش دہلوی(مرحوم) اور راغبؔ مرادآبادی شامل ہیں، علاوہ ازیں اس صنف کے سرپرستوں میں پروفیسر محمد رئیس علوی‘ محسن بھوپالی(مرحوم)،اقبال حیدر، وضاحت نسیم اور دستاویزی کام کے لحاظ سے سہیل احمد صدیقی نمایاں ہیں۔ہائیکو کے مقبول اور ممتاز شعراء میں لیاقت علی عاصم، آفتاب مضطرؔ،شاہدہ تبسمؔ،رخسانہ
 صبا،شاہدہ حسن،شہاب الدین شہابؔ،یاسر چغتائی، جمال ؔنقوی،فاطمہ حسن اور راشد نور اہم نام ہیں۔بزرگ شعراء میں قمرؔ جمالی امروہوی، رساؔ چغتائی، حمایت علی شاعرؔ،شبنم رومانی، منظر ایوبی، جاذب ؔقریشی،رئیس باغی،سحرانصاری، سہیل غازی پوری جیسے قابل ذکر سخنور اور جواں سال قافلے میں سہیل احمد صدیقی ، روبینہ تحسین بیناؔ، شہزاد نیاز سمیت بہت سے نام شامل ہیں۔جاپانی سے واقف اردو شعراء میں ڈاکٹر محمد امین، پروفیسر محمد رئیس علوی، محترمہ وضاحت نسیم، آفتاب مضطر اور سب سے کم عمر شہزاد نیاز شامل ہیں۔
O     اردو ہائیکو کے مجموعوں میں بعض اپنی انفرادیت منواچکے ہیںجیسے آفتاب مضطرؔ کا ’’ سورج کے اس پار‘‘ جس میں تمام نظموں پر عنوان چسپاں کیا گیا اور منتخب ہائیکو کے جاپانی تراجم پیش کیے گئی، جمال ؔنقوی کا ’’ نغمے سورج دیس کی‘‘ جس میں منتخب نظموں کا جاپانی اور تمام نظموں کا انگریزی میں ترجمہ اور عنوانات کا التزام کیا گیا،نسیم سحر کا ’’ روشن دان میں چڑیا‘‘ جس میں بحر متقارب اور بحر خفیف مسدس دونوں کا بیک وقت پہلی مرتبہ اہتمام کیا گیا۔ اس طرح ہائیکو مجموعوں میں خارج و باطن کے تمام پہلوٶں کی حسین اور بھرپور ترجمانی کے لحاظ سے فراست رضوی کا ’’ کہر میں ڈوبی شام‘‘قابل ذکر ہی۔ ضمنی نکات میں عرض کرتا ہوں کہ آفتاب مضطر اور جمال ؔنقوی دونوں کے منتخب کلام کا ترجمہ عزت مآب شیگی یوکی اتاکاShigiuki Ataka]»سابق مشیر برائے کونسل جنرل جاپان، کراچی« نے کیا جن کا اسلامی نام محمد عظمت ہی۔جمالؔ کی تمام ہائیکو کا انگریزی ترجمہ سہیل احمد صدیقی نے کیا ہی۔ اردو شاعرات میں پہلا مجموعہ ’’ پانچ ۔سات۔پانچ‘‘ محترمہ ثروت سلطانہ ثروتؔ کی تخلیق ہی… ابھی پروگرام کے آغاز سے کچھ دیر قبل وہ مجھے بتارہی تھیں کہ ان کا دوسرا ہائیکو مجموعہ بھی منتظر اشاعت ہی، یوں وہ پہلی اردو شاعرہ ہوں گی جن کے دو ہائیکو مجموعہ ہائے کلام شائع ہوئی۔محترمہ وضاحت نسیم کے مجموعے ’’ دل چھونے والا منظر‘‘ میں طبع زاد کلام کے ساتھ ساتھ جاپانی سے براہ راست تراجم بھی شامل ہیں‘ جبکہ ان کے فوری بعد اسی سال (۶۰۰۲ئ؁ میں)  راقم ِ حروف کا مجموعہ ہائیکو ’’ خوش کن ہے پت جھڑ‘‘ منظر عام پر آیا ، جو اس لحاظ سے منفرد ہے کہ اس میں اس خاکسار نے کسی بزرگ سے تنقیدی مضمون لکھوانے کی بجائے خود اپنے کلام پر تنقید کی ہی۔
     اردو ہائیکو کی روز افزوںمقبولیت میں سب سے اہم کردار ان سالانہ ہائیکو مشاعروں کا ہے جو ۳۸۹۱ئ؁ میں جاپانی قونصل خانے کے ثقافتی مرکز نے پروفیسر ڈاکٹر سید ابوالخیر کشفی کی تحریک سے شروع کیے اور آج تک کامیابی سے جاری ہیں۔ ان مشاعروں میں طبع زاد کلام کے ساتھ ساتھ جاپانی سے (بذریعہ انگریزی)منظوم تراجم پیش کیے جاتے ہیں۔کچھ سال سے یہ مشاعرہ پاکستان جاپان کلچرل ایسوسی ایشن کے انصرام و اشتراک سے منعقد ہورہا ہے ۔
     کچھ عرصے بعد (۰۹۹۱ئ؁ کی دہائی میں) سفارت خانہ جاپان کی سرپرستی میں اسلام آباد میں اور پھر قونصل خانے کے زیر نگرانی کوئٹہ اور لاہور میں ہائیکو مشاعروں کا انعقاد شروع ہوا۔پاکستان ہائیکو سوسائٹی کے بانی اقبال حیدر نے متواتر ۴۲ سال ہائیکو مشاعروں میں کلام پیش فرمایا اور ان کی مساعی سے متعدد مقامی زبانوں میں ہائیکو شاعری کا فروغ ہوا۔آج جب ہم ان کی خدمات کو خراج تحسین پیش کر رہے ہیں تو وہ ہمارے درمیان تشریف فرما نہیں، ہم سب ان کی بحالی صحت کے لیے دعا گو ہیں۔
     ۸۹۹۱ئ؁ میں اردو دنیا میں ہائیکو کے فروغ کے لیے پہلا اور واحد کثیر لسانی [Multi-lingual]رسالہ ’’ ہائیکو انٹرنیشنل ‘‘ کراچی سی
 جاری ہوا۔ تا حال اس رسالے کے نو(۹) شمارے شائع ہوچکے ہیں، جن میں چار مشاہیر سخن محسن بھوپالی(مرحوم)، اقبال حیدر، وضاحت نسیم اور رئیس علوی پر وقیع خصوصی شمارے بھی شامل ہیں۔ہائیکو انٹرنیشنل کا ’’ اقبال حیدر نمبر‘‘ پندرہ علاقائی و بین الاقوامی زبانوں میں مواد اور ترتیب وپیش کش کے لحاظ سے اہم ترین کارنامہ ہی، جبکہ ہائیکو انٹرنیشنل مجموعی طور پر پچیس زبانوں میں ہائیکوسے متعلق مواد (طبع زاد ،تراجم،تنقیدی مضامین،تبصری،تعارف، انتخاب سمیت) شائع کرکے عالمی ریکارڈ قائم کرچکا ہی۔اقبال حیدر نمبر کے دو ایڈیشن شائع ہوئے اور ان کی تقریب پذیرائی کراچی اور کوئٹہ کے دو ممتاز مقامات پر منعقد ہوئی۔اس جریدے کا بانی مدیر و ناشر یہ خاکسار ہی۔
     آخر میں یہ عرض کرنا ،ناگزیر معلوم ہوتا ہے کہ ہئیت،مزاج اور موضوعات کے تنوع کے سبب، اردو ہائیکو بھرپور اور پرکشش صنف سخن بن چکی ہی۔ حمد و نعت ، منقبت و مناجات، رنگِ تغزل، حب وطن، شہر آشوب، عصر حاضر کی ہمہ جہت عکاسی، مستقبل بینی، غرض کس موضوع اور کس جہت کی کمی ہی… اردو ہائیکو جمالیاتی لحاظ سیaesthetically]جاپانی ہائیکو سے مختلف بھی ہے ، کہیںکہیں مماثل بھی اور ہم اہل زبان کی نظر میں تو دنیاکی کسی بھی زبان کی ہائیکو سے زیادہ مٶثربھی!
     اختتام پر میں ہائیکو مشاعرے کے جشن سیمیں کی مناسبت سے اپنی ایک ہائیکو آپ کی نذر کرتا ہوں:
دکھ سکھ سانجھا ہو
ساون رُت ہو یا پت جھڑ
راضی رانجھا ہو
» ۵۱ مارچ ۸۰۰۲ء ؁سلورجوبلی اردو ہائیکو مشاعرے میں پڑھا گیا کلیدی مضمون «

6 comments for “اردو ہائیکو نگاری۔ ایک مختصر جائزہ… سہیل احمد صدیقی

  1. اکرم خاور کوئٹہ
    November 22, 2014 at 21:48

    میں ہائیکو پر پی ایچ ڈی کرنا چاہتا ہوں مجھے سارا مواد درکار ہے۔

  2. May 3, 2014 at 05:15

    http://www.kashmiruzma.net/full_story.asp?Date=14_2_2010&ItemID=2&cat=9#.U2P6noFdWI9

    GK Communications Pvt. Ltd
    Edition :

    RAJAB 3, 1435 SRINAGAR 03 MAY 2014
    ادب نامہ
    ہائیکوایک تعارف

    ع۔ع۔عارف
    جدیداُردو شعری اصنا ف میں ” ہا ئیکو “ سب سے زیا دہ ترقی یا فتہ ، دلچسپ اور مو ثر صنف ہے۔ادب کا ہر ذہین اور با شعور قاری جا نتا ہے کہ وقت و حالا ت کے پیش ِ نظر بہت سی نئی صنفیں وجود میں آ ئیں جن میں سے کچھ تو پیدا ہو تے ہی دم توڑ گئیں اور کچھ تھوڑے عرصہ بعد آ پ اپنی پہچان کھو بیٹھیںلیکن کچھ اصنا ف شدید مخالفت کے با وجو د ادب میں اپنی جگہ بنا نے میں کا میا ب رہیں۔ انہی میں ایک نا م ہائیکو کا آتا ہے۔
    اُردو ادب میں بیسویں صدی کے پہلے چار دہائے خاص طورپراس لئے اہمیت کے حامل ہیں کہ انہی سالوں میں ادب کی بہت سی مغربی اوردیگرغیرملکی اصناف پر طبع آزمائی کی گئی ۔نثرمیں جہاں ناول ‘افسانہ اور رپورتاژ نے اپنی جگہ بنائی وہیں نظم میں آزاد نظم ‘ نظم عاری ‘ ترائیلے اورجاپانی صنفِ شاعری ہائیکو پر بھی تجربات کئے گئے۔ہائیکوجاپان کی ایجاد ہے اورجاپانی ادب میں ہائیکوسب سے زیادہ مشہورومقبول صنفِ سُخن مانی جاتی ہے جاپانی شاعری کے وسیلے سے ہی یہ صنف اُردو اورانگریزی میں متعارف ہوئی ۔ اُ ردو ادب تک آ تے آ تے عالمی پیما نے پرجا پا نی، امریکی، روسی اور فرانسسی ممالک کے عظیم شاعروں نے اس صنف کو شہرت دلا نے میں ایک غیر معمولی کر دار ادا کیا ہے۔ ہائیکوکو”ہائے کائے‘ ‘ہاکواورہکّوبھی کہتے ہیں۔اس میں کل تین مصرعے ہوتے ہیں اورتینوں مصرعوں کے لئے سترہ صوتی ارکان مقررکئے گئے ہیں جن کی ترتیب پانچ،سات،پانچ ہے مثلاًہائیکو کاپہلااورتیسرامصرعہ پانچ پانچ ارکان پرمشتمل ہوگااوردوسرامصرعہ سات ارکان پر ۔لیکن اصطلاحی معنوں میں ہائیکواس نظم کوکہتے ہیں جس کے تینوں مصرعوں میں ایک مکمل مضمون اداکیاجائے ۔ہائیکوکے لئے کوئی مخصوص بحرمقررنہیں اورنہ ہی ا س میں قافیہ کی پابندی ہے بلکہ اس میں تو صوتی آہنگ کا خاص خیال رکھاجاتاہے ۔انگریزی ادب کی مشہور و معروف میریم ویبسٹرزکالجیٹ ڈکشنری میں ہائیکوکی تعریف یوںکی گئی ہے:
    ”Hai – Ku (Jp) an unrhymed verse form of Japanse orgin having three lines containing usu – five , seven , five syllables respectively, also a poem in this form usu – having a seasonal reference” P-560 11th edition
    اس تعریف سے یہ ثابت ہوتاہے کہ ہائیکو حسبِ معمول (پانچ ۔سات۔ پانچ) والی ترتیب کے مطابق صحیح ہے اوریہی وہ تعریف ہے جسے اُردوکے بڑے نقّاد کلیم الدّین احمد کے علاوہ پروفیسر گیا ن چند جین، ڈاکٹرعنوان چشتی اورڈاکٹرشیخ عقیل احمد وغیرہ نے بھی تسلیم کیاہے جبکہ درس ِبلاغت میں شمیم احمد صاحب نے ان کی ترتیب چار۔آٹھ ۔پانچ بتائی ہے جسے اہلِ قلم صحیح نہیں مانتے ۔
    ہائیکوکےلئے موضوع کی کوئی قید نہیں ۔دُنیاکی بے ثباتی‘فلسفہ ‘عشق ‘سیاست ‘سماج ‘معاشرت ‘اخلاق ‘تہذیب غرض دُنیاکے تمام سنجیدہ اور غیرسنجیدہ موضوعات و مسائل پرکہی جاسکتی ہے ۔تاہم بااعتبار موضوع ہائیکوکادامن بے حد وسیع ہے لیکن حسن و عشق اورمناظرِفطرت اس کے خاص موضوعات ہیں۔ اُردومیں ہائیکوکی روایت کاثبوت رسالہ ”ساقی “ کے جاپانی نمبرسے ملتاہے جو۱۹۳۶ءمیں شائع ہواتھا۔اس میںجاپان کی بعض اصنافِ سُخن کے تعارف کے ساتھ اُن کے ترجمے بھی درج تھے ۔ بیس سال بعد ۱۹۵۶ءمیں رسالہ ”معاصر“ پٹنہ میں کلیم الدین احمد کاایک مضمون ”جغرافیہ وجود “ شائع ہواتھا جس میں اُنہوں نے جاپانی اصناف ِسُخن کامفصّل تعارف اور ترجمے بھی پیش کئے تھے۔علاوہ ازیں وزیرآغانے اپنی کتاب”معنی اورتناظر“ اور ڈاکٹر عنوان چشتی نے اپنے ایک مضمون ’اُردوشاعری میں ہیئت کے تجربے ‘میں ہائیکو پرسرسری نظرڈالی ہے۔
    اُردومیں ہائیکونگاری کوپروان چڑھانے میں اوراق ‘ایوانِ اُردو‘ شاعر،کتا ب نما اورتمثیلِ نوجیسے معیاری رسالوں کااہم رول ہے۔اُردوکے بہت سے چھوٹے بڑے جدیدشعراءنے ہائیکوپرطبع آزمائی کی ہے وہ چاہے سارک مما لک سے تعلق رکھتے ہوں یاپھراُردوکی نئی بستیوں سے۔خلیجی ممالک میں بھی اس پر طبع آزمائی کی جا رہی ہے۔لیکن اس میں شک نہیں کہ بہت سے شعراءنے ہائیکوکی مخصوص ہیئت پرعمل نہیںکر کے اس کے بنیا دی ڈھا نچے کو مسخ کرنے کی کو شش کی ہے۔جس کا نتیجہ یہ ہواکہ بہت سے ناقدین اورقارئین بھی ہائیکوسے متنفرہونے لگے۔اُردومیںاس کی مثالیں بیسویں صدی کی چوتھی دہائی سے ملناشروع ہوجاتی ہیں مگراس کے باوجودہا ئیکو کواُردو ادب میں وہ مقام نہ مل سکا جوملناچاہئے تھا۔اس کی ایک وجہ یہ بھی ہوسکتی ہے کہ ہندوستانی ادب میں پہلے سے ہی تین مصرعوں کی ایک مقبول صنفِ سُخن ”ماہیا“شمالی ہندوستان میں موجود تھی۔ جو نہ صرف پنجابی ،ہندی بلکہ اردو میںبھی رائج اور مقبول تھی اوراس پر طرئہ یہ کہ ماہیا کیلئے لازمی ہے کہ اس کا پہلااور تیسرا مصرعہ ہم قافیہ ہو اس سے ماہئیے کی غنائیت میں اضافہ ہوجاتا ہے اور ہم غزل کی غنائیت زدہ ذہنیت کی وجہ سے اس صنف کو کہ جس میں قافیہ کا التزام ضروری نہیں ہے ۔پوری طرح سے قبول نہ کر پائے ۔
    اُردومیں جن شعراءنے ہائیکوکہے ہیں ان میں محمد علوی ‘انورفروز ‘تنویرپھول‘عطاعابدی‘ نصیراحمدناصر‘ اقبال حیدروغیرہ کے اسماءاہم ہیں۔
    راقم الحروف نے بھی کئی ہائیکوکہہ کرمشاعروںمیں دادوتحسین حاصل کی ہے۔راقم الحروف کا شائع شدہ شعری مجموعہ” دُور اُفق سے پا ر“ جس میں بطور خاص ہائیکو شائع کئے ہیں۔ یہ نہ صرف یہ کہ میراپہلاشعری مجموعہ ہے بلکہ سرزمین ِپونچھ سے شائع ہونے والا وہ پہلامجموعہ ہے جس میں ہائیکو کی صنف شامل ہے ۔ہائیکو کے علاوہ اس مجموعہ میں چندغزلیں اورنثری نظمیں بھی شامل ہیں۔ اُردو کے چند نا مور ہا ئیکو نگا روں کے چند ہا ئیکو بطور نمونہ پیش ِ خدمت ہیں۔
    چاند چھپ کے تکتا ہے/رات با لکو نی میں /بے لبا س بیٹھی ہے۔۔۔۔۔(نصیر احمد نا صر)
    طرز ِ گلشن سیکھ/کہتی ہے ہر نو ک ِ خار/جینے کا فن سیکھ۔۔۔۔۔۔(عطا عابدی)
    دانہ گندم کا /کھا کر جنت سے نکلے /آدم اور حوا۔۔۔۔۔۔۔(تنویر پھول)
    خواب تھا وہ منظر/ ہم نے گو ہر ما نگے تھے /ملے ہیں کیوں پتھر۔۔۔۔۔۔(انوار فیروز)
    دن بھر اُڑان سے /میں گھبراکے دھوبیٹھا/ہاتھ اپنی جان سے……..(ع۔ع۔عارف)
    ان تمام ہا ئیکوز میں معنی آفرینی ‘مقصدیت ‘روانی اور سلاست کے سبھی فنی عناصرموجودہیں۔یہی نہیں بل کہ حسنِ الفاظ کے ساتھ ساتھ شعری آداب کا بھی لحاظ رکھاہے ۔مختصر اً یہ کہا جا سکتا ہے کہ بیسویں صدی میں پیدا ہونے والی اس کم عمر صنف شعر نے با ضابطہ آ غاز سے لے کر عہد حاضر تک ترقی کے جو مراحل طے کئے ہیںوہ اُردو ادب کے لئے سنگ ِ میل کی حیثیت ہیں۔ فنی وتکنیکی نقطہ نظر سے دیکھا جا ئے تو بیسویں صدی بڑی قیا مت خیز صدی رہی ہے۔ اس صدی نے جہا ں تما م سائنسی علو م کی مختلف منا زل کوبڑی تیزی سے طے کیا ہے وہیں نئی نئی ایجا دات سے علمی وادبی دنیا میں بھی عظیم انقلاب بر پا کئے ہیں۔ اُردو ادب بھی ان ایجا دات و انقلا با ت سے متا ثر ہوئے بغیر نہیں رہا ۔اور اس تیز رفتا ری کے عالم میںہا ئیکو جیسی مختصر ترین صنف ِ شعر نے تو بلخصوص تما م قا ر ئین کی توجہ اپنی جا نب مبذول کرانے میں جو کا میا بی حاصل کی ہے۔وہ کسی سے پو شیدہ نہیں ۔

    یہ صفحہ ای میل کیجئے پرنٹ کریں

    ہوم پیج
    کشمر
    شھرنامہ
    مختصرخبریں
    اداریہ
    ادارتی مضمون
    مقابل اداریہ
    قارئین کے خطوط
    آج کی تصویر
    رابطہ کریں
    ا شتہا رات
    ای پیپر

    سابقہ شمارے
    DD MM YY

    Go

    © 2003-2014 KashmirUzma.net
    طابع وناشر:رشید مخدومی | برائے جی کے کمیونی کیشنزپرائیوٹ لمیٹڈ | ایڈیٹر :فیاض احمد کلو
    ایگزیکٹو ایڈیٹر:جاوید آذر | مقام اشاعت : 6 پرتاپ پارک ریذیڈنسی روڑسرینگرکشمیر RSS Feed

    GK Communications Pvt. Ltd
    Designed Developed and Maintaned By Imobisoft Software

  3. تعظم حجازی
    December 8, 2013 at 03:39

    ایک معلوماتیی مضمون

  4. Sohail Ahmed Siddiqui
    January 28, 2011 at 22:01

    بہت ممنون ہوں

  5. January 27, 2011 at 14:55

    ہائیکوانٹرنیشنل شمارہ نہم اوردہم آن لائن دستیاب:2008ء سے آن لائن اجرا (دنیابھرمیں ایسا واحد جریدہ)
    http://haikuinternational.spaces.live.com

  6. January 27, 2011 at 14:49

    بہت ممنون ہوں….آپ نے تو کمال کردیا…دوسرا مضمون پیش کرتاہوں

آپ کومنٹ میں اپنی رائے دے سکتے ہیں ۔