حکومت کا گھڑی کو دو گھنٹے آگے کرنے پر غور

ٹوکیو: جاپان میں رہنے کے لیے پسندیدہ چیزوں میں سے ایک ہر سال موسمِ بہار میں گھڑیوں کو ایک گھنٹہ آگے کرنے کے تشدد سے خلاصی ہے۔ روشنی بچانے والے اوقات نہ ہونے کی وجہ سے آپ کو ہمیشہ پتا ہوتا ہے کہ جاپان میں کیا وقت ہے۔ بدقسمتی سے ایسا لگ رہا ہے کہ ایک جاپانی سیاستدان ایسا کرنے جا رہا ہے۔

تاہم، ٹوکیو کے گورنر ناؤکی اینوسے نے اس ہفتے تجویز دی کہ جاپان اپنے “معیاری وقت” کو دو گھنٹے آگے کر دے۔

اس تجویز کے پیچھے کم از کم ایک منطقی وجہ موجود ہے۔ جاپان میں موجود مالیاتی اداروں کو پوزیشن میں لانے کی کوشش کے تحت وہ چاہتے ہیں کہ ٹوکیو کی مالیاتی منڈیاں دنیا میں سب سے پہلے کھلیں۔ (فی الوقت آسٹریلیا اس ضمن میں پہلے نمبر پر نظر آتا ہے۔)

اینوسے کی تجویز کو جون میں حکومت کی اقتصادی نشو و نما کی حکمت عملی کے تحت زیرِ غور لایا جائے گا۔

یہ بات جاننے میں دلچسپ ہے کہ جاپانی معیاری وقت پچھلے 125 سے زیادہ برسوں سے تبدیل نہیں ہوا، جب یہ پہلی مرتبہ 1886 میں قائم کیا گیا تھا۔

آپ کومنٹ میں اپنی رائے دے سکتے ہیں ۔