ایران، جاپان میں منجمد اثاثوں پر مفید بات چیت ہوئی: ظریف

تہران: ایرانی وزیرِ خارجہ محمد جواد ظریف نے جمعرات کو کہا کہ انہوں نے جاپان کے ساتھ “تعمیری اور مفید” بات چیت کی۔ وہ عالمی پابندیوں کے تحت ایران کے منجمد اثاثوں میں سے کچھ کی واپسی پر مذاکرات کرنے آئے تھے۔

ایران اور عالمی طاقتوں نے نومبر میں ایک معاہدہ کیا تھا۔ اس کے تحت ایران نے اپنے متنازع ایٹمی پروگرام کے کچھ حصے عارضی طور پر روکنے پر رضامندی ظاہر کی۔ بدلے میں اسے عالمی پابندیوں سے محدود طور پر نجات ملی۔ ان پابندیوں کے باعث ایران عالمی بینکاری نظام سے بھی بالکل باہر ہو چکا تھا۔

ایران نے کہا تھا کہ وہ جاپانی، جنوبی کوریائی اور سوئس بینک استعمال کر کے اپنی عالمی تجارت کے معاملات کرنا چاہتا ہے۔ اس تجارت کو نومبر کے معاہدے میں مغربی پابندیوں سے استثنا دیا گیا تھا۔

سرکاری خبر رساں ادارے اِرنا کے مطابق، ظریف نے جاپان سے مزید کہا کہ وہ ایرانی پٹرول کا روپیہ آزاد کرانے میں “زیادہ فعال کردار” ادا کرے۔ ان کا بڑا حصہ جاپان میں ہے چونکہ جاپان روایتی طور پر ایرانی تیل کا بڑا درآمد کنندہ رہا ہے۔

پابندیوں پر نرمی کے بدلے میں ایران نے یورینیم کی افزودگی کو پانچ فیصد خالص پن تک محدود کر دیا تھا۔ اس نے زیادہ خالص افزودگی کا عمل روک دیا جس پر مغرب کو خدشات تھے کہ وہ اسے پرامن مقاصد کے علاوہ بھی استعمال کر سکتا ہے۔

آپ کومنٹ میں اپنی رائے دے سکتے ہیں ۔