آبے غالباً دسمبر کے قریب اگلے سیلز ٹیکس اضافے کا فیصلہ کریں گے

ٹوکیو: وزیرِ اعظم شینزو آبے غالباً دسمبر میں فیصلہ کریں گے کہ سیلز ٹیکس میں دوسری دفعہ اضافہ کر کے اسے 8 سے 10 فیصد کیا جائے یا نہیں۔ یہ بات وزیرِ اقتصادی و مالی پالیسی آکیرا آماری نے اتوار کو بتائی۔

یکم اپریل کو 5 سے 8 فیصد ہونے والا اضافہ 17 برسوں میں پہلا اضافہ تھا اور دو مراحل پر مشتمل بڑھوتری کا پہلا قدم تھا۔ منصوبے کے مطابق اکتوبر 2015 تک محصول کو بڑھا کر 10 فیصد کیا جانا ہے تاکہ ملک کے جحیم سرکاری قرضے کو کم کیا جا سکے۔

آبے کے پیش رو وزیرِ اعظم یوشی ہیکو نودا نے 2012 میں دائت کے ذریعے اس قانون سازی پر مجبور کیا تھا۔ اس کے تحت دو مراحل میں سیلز ٹیکس اضافہ نافذ ہوا۔

آماری نے کہا کہ آبے پچھلے منگل کے ٹیکس اضافے کو زیرِ غور لائیں گے اور گرما اور ابتدائی خزاں میں جاپان کی اقتصادی کارکردگی پر بھی نظر ڈالیں گے۔ اس کے بعد وہ فیصلہ کریں گے کہ اگلے اضافے کو نافذ کیا جائے یا نہیں۔

جاپان کی معیشت نے 2013 کی پہلی ششماہی میں صنعتی طاقتوں کی طاقتور ترین شرح نمو درج کی تھی۔ اسے آبے کی دوبارہ افراطِ زر پیدا کرنے والی پالیسیوں کی معاونت حاصل تھی تاہم تب سے یہ 1 فیصد سالانہ سے بھی کم شرح نمو پر آ چکی ہے۔

آپ کومنٹ میں اپنی رائے دے سکتے ہیں ۔